چیئرمین پی ٹی آئی نے موجودہ آرمی چیف کو تجویز دے دی
نئے آرمی چیف کا معاملہ نئی حکومت کے آنے تک روک دینا چاہئے اور نئی حکومت نئے آرمی چیف کا انتخاب کرنا چاہے۔ چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کا خطاب
(ٹوٹل میگزین )
12/9/2022

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے موجودہ آرمی چیف کو توسیع دینے کی تجویز دے دی، نئے آرمی چیف کا معاملہ نئی حکومت کے آنے تک مئوخر کردینا چاہیے، نئی حکومت نئے آرمی چیف کا انتخاب کرے۔ جیو نیوز کے مطابق چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے موجودہ آرمی چیف کو توسیع دینے کی تجویز دیتے ہوئے کہا کہ نئے آرمی چیف کا معاملہ نئی حکومت کے آنے تک مئوخر کردینا چاہیے، نئی حکومت نئے آرمی چیف کا انتخاب کرے۔
انہوں نے کہا کہ میں امریکا کا مخالف نہیں ہوں، میں الیکشن پر بات کرنے کو تیار ہوں۔ انہوں نے کہا کہ اسلام آباد ہائیکورٹ میں بولنے کی اجازت ملتی تو شاید معافی مانگ لیتا۔ مزید برآں چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے ٹویٹر پر کہا کہ شہباز شریف سے میرا سوال: کیا تحریک انصاف کے خوف کی وجہ سے میڈیا پر ہماری زباں بندی اہلِ صحافت پر تشدد اوران کے خلاف جھوٹے مقدموں کے اندراج، ٹی وی اور یوٹیوب پر مجھے اور تحریک انصاف کو بلیک آؤٹ کرنے اور میری فلڈریلیف ٹیلی تھون کی نشریات روکنے جیسی مذموم کوشش کے آپ ذمہ دار ہیں؟اے آروائی کے مطابق چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کی زیرصدارت سینئر رہنماؤں کا اجلاس ہوا، اجلاس میں اسد عمر، شبلی فراز، فواد چودھری ودیگر رہنماؤں نے شرکت کی۔

اجلاس میں موجودہ سیاسی صورتحال اور دیگر امور پر بات چیت کی گئی، سیکرٹری جنرل اسد عمر نے پاکستان پر قرضوں سے متعلق بریفنگ دی۔ پاکستان کو لگ بھگ 30 ارب ڈالر کے قرض واپس کر نے ہیں،جبکہ آئی ایم ایف سے ملنے والا قرض محض 2 ارب ڈالر ہے، سیاسی عدم استحکام سے پاکستان کی بانڈ مارکیٹ مکمل تباہ ہوچکی ہے، جب تحریک انصاف کی حکومت ختم کی گئی تو بانڈ 4 فیصد ڈسکاؤنٹ ریٹ پر تھا،یہ بانڈ اب 50 فیصد ڈسکاؤنٹ ریٹ پر مل رہا ہے، یہ کیفیت ظاہر کرتی ہے کہ پاکستان دیوالیہ پن کی دہلیز پر کس قدر آگے جاچکا ہے۔
انہوں نے بریفنگ میں مزید بتایا کہ آئندہ چند ماہ میں ملکی معیشت کو سنگین صورتحال کا سامنا ہوگا۔ اجلاس میں سابق وزیرخزانہ شوکت ترین نے کرنسی کی صورتحال پر بریفنگ دی۔ عمران خان نے قائدین کو معاشی بحالی کی حکمت عملی بلاتاخیر تیار کرنے کی ہدایت کی۔ شوکت ترین کو ملکی معیشت پر باضابطہ فوکل گروپ تشکیل دینے کی ہدایت کی۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ فوکل گروپ معیشت سے جڑے 16 موضوعات پر متبادل حکمت عملی تیار کرے گا۔
چئیرمین پی ٹی آئی عمران خان کا کہنا ہے کہ ملک شدید بحران کے نرغے میں ہیں۔ ملکی معیشت تباہی کے دہانے پر پہنچ چکی ہے۔ تحریک انصاف فوری طور پر متبادل معاشی منصوبہ عمل تیار کرے۔ لازم ہے مضبوط معیشت کے لیے اپنی تجاویز قوم کے سامنے رکھیں۔ سیلاب متاثرین کے لیے منعقد ٹیلی تھون کا بلیک آؤٹ شرمناک ہے۔ تحریک انصاف میڈیا سینر شپ کا معاملہ بھی ہر سطح پر اٹھائے گی۔اجلاس میں میڈیا کی زبان بندی،صحافیوں کے خلاف کارروائیوں کا معاملہ بھی ہر فورم پر اٹھانے کا فیصلہ کیا گیا۔
مزید پڑھیں

Previous post سات روز کی موسمی حالت (ٹوٹل میگزین )<br>11/9/2022
Next post عمران خان نے کل ملک کے سیاسی مستقبل کا ایک عملی فارمولا پیش کیا فواد چوہدری<br>ملک کی اقتصادی حالت مزید سیاسی عدم استحکام کا بوجھ نہیں اٹھا سکے گی،رہنما تحریک انصاف