پی.ٹی.آئی کی جلسے ودھرنے کی اجازت نہ دینے کیخلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ ہے
جہاں پر بھی جگہ ہو خلاف ورزی کا ذمہ دار کون؟ سپریم کورٹ کا آرڈر ہے اور توہین عدالت کیس بھی چل رہا ہے‘ مناسب حکم نامہ جاری کریں گے۔ اسلام آباد ہائیکورٹ کے ریمارکس
(ٹوٹل میگزین )

03/11/22

اسلام آباد ہائیکورٹ نے پی۔ ٹی ۔آئی کی جلسہ اور دھرنے کی اجازت نہ دینے کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں پی۔ ٹی آئی کی جلسہ اور دھرنا کی اجازت نہ دینے کے خلاف درخواست پر سماعت ہوئی ہے ۔ جستس عامر فاروق نے درخواست پر سماعت کی، اس دوران پی ٹی آئی وکیل بابر اعوان اسلام آباد ہائی کورٹ میں پیش ہوئے، عدالت نے استفسار کیا کہ انتظامیہ کو نوٹس ہوا تھا کیا کوئی پیش ہوا؟ جواب نفی میں ملنے پر عدالت نے انتظامیہ کے مجاز افسر کی عدم پیشی پر سرزنش کی، جسٹس عامر فاروق نے اظہار برہمی کرتے ہوئے کہا کہ یہ ہائی کورٹ ہے پیش ہوں اور اسلام آباد ہائی کورٹ نے ضلعی انتظامیہ کو فوری طلب کرلیا ہے ۔
دوران سماعت ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد بیرسٹر جہانگیر جدون عدالت میں پیش ہوئے، ایڈووکیٹ جنرل اسلام آبادنے 25 مئی کے سپریم کورٹ کے فیصلے کو پڑھ کر سنایا، جس پر جسٹس عامر فاروق نے ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد سے استفسار کیا کہ کیا یہ سپریم کورٹ کا آرڈر ہے ؟ اس پر بیرسٹر جہانگیر جدون نے کہا کہ یہ چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کا سپریم کورٹ میں جمع کرایا گیا جواب۔

جسٹس عامر فاروق نے استفسار کیا کہ عمومی طور پر جلسوں کی اجازت سے متعلق کیا طریقہ کار ہے؟ اس کے جواب میں ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد جہانگیر جدون نے کہا کہ ہوتا یہی ہے پارٹی کی اجازت سے یقینی دہانی کرائی جاتی ہے تاہم پی ٹی آئی نے ریلی کی اس سے نقصان ہوا تھا، پولیس اہلکار زخمی ہوئے تھے۔ اس موقع پر اپنے ریمارکس میں عدالت نے کہا کہ مناسب حکم نامہ جاری کریں گے، آپ دیکھ لیں جہاں بھی جگہ ہو خلاف ورزی کا ذمہ دار کون گا؟ سپریم کورٹ کا آرڈر بھی ہے اور توہین عدالت کیس بھی چل رہا ہے۔ بعد ازاں پی ٹی آئی جلسہ اور دھرنے کی اجازت نہ دینے کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا گیا، اسلام آباد ہائی کورٹ نے فریقین کے دلائل سننے کے بعد فیصلہ محفوظ کیا۔
مزید پڑھیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Previous post کیسز جلدی جلدی ختم‘ مجرموں کو کس نے اقتدار پر بٹھایا؟ عمران خان<br>4 سال بڑی کوشش کی بڑے مجرموں کو قانون کے کٹہرے میں لاؤں ‘ مجرموں کو اقتدار میں لانے والے کون ؟ جو قومیں بڑے ڈاکوؤں کو سزائیں نہیں دیتیں وہ تباہ ہوگئیں۔ لانگ مارچ کے شرکاء سے خطاب
Next post سات روز کی موسمی حالت (ٹوٹل میگزین )